دیکھو تو مِرے دِل پہ یہ جو چھالا ہُؤا ہے


دیکھو تو مِرے دِل پہ یہ جو چھالا ہُؤا ہے
اِس واسطے تو پیار کو بھی ٹالا ہُؤا ہے

ہاں کر دو مِری جان اگر آیا ہے رِشتہ
اور لڑکا بھی تو دیکھا ہؤا، بھالا ہُؤا ہے

سب چھوڑ کے آئے تھے، مگر (آج کراچیؔ)
ہم بِچھڑے ہُوؤں کے لِیےانبالہؔ ہُؤا ہے

میں کب کا بِکھر جاتا غمِ دہر کے ہاتھوں
بس گِرد مِرے غم کا تِرے جالا ہُؤا ہے

ہوتا ہُوں اکیلا تو مُجھے آ کے سنبھالے
اِک درد کہ بے درد سا جو پالا ہُؤا ہے

دکھ درد کِسی اور کا، بے چین مِرا دِل
یُوں درد کے سانچے میں اِسے ڈھالا ہؤا ہے

کیا بات کرؤں کیا مِری اوقات رفِیقو
جُنبِش کے لِیئے لب پہ مِرے تالا ہُُؤا ہے

کیا لاج رہی تیری اگر آج بہم ہیں
اے پیار کے دُشمن تِرا مُنہ کالا ہُؤا ہے

آنکھوں پہ کہوں شعر یا میں گھر کو سنبھالوں
حسرتؔ نے پرکھشا میں مُجھے ڈالا ہؤا ہے

رشید حسرتؔ

میں کور چشموں میں اب آئینے رکُھوں گا کیا


میں کور چشموں میں اب آئینے رکُھوں گا کیا
کوئی پڑھے گا نہِیں مُجھ تو لِکُھوں گا کیا؟

میں دِل سے تھوڑی یہ کہتا ہوں "تُم بِچھڑ جاؤ"
تُمہارے ہِجر کے صدمے میں سہہ سکُوں گا کیا؟

کوئی جو پُوچھے کہ شِعر و سُخن میں کیا پایا
تو سوچتا ہوں کہ اِس کا جواب دُوں گا کیا؟

میں اپنے بچّوں کو بازار لے تو آیا ہوں
ہے جیب خالی تو اِن کے کھلونے لُوں گا کیا؟

کِیا ہے مُجھ پہ بھروسہ تو دفن سمجھو اِنہیں
تُمہارے راز کِسی سے کبھی کہُوں گا کیا؟

بدل لیا ہے اگر تُم نے راستہ تو کیا
ذرا سی بات پہ اب رات بھر جگُوں گا کیا؟

رشِیدؔ وقت نے چہرے سے نوچ لی رونق
میں کِھکِھلا کے کِسی بات پر ہنسُوں گا کیا؟

رشید حسرتؔ




کہاں ہے پیار کی تھپکی، پذِیرائی کہاں ہے

کہاں ہے پیار کی تھپکی، پذِیرائی کہاں ہے
تبھی تو شاعری میں دوست گہرائی کہاں ہے

میں کِس کے سامنے اپنا دلِ بیتاب کھولوں
نیا ہوں شہر میں اب تک شناسائی کہاں ہے

کبھی تھی اِن سے وابستہ کہانی، جانتے ہو
سجی تو ہیں مگر آنکھوں میں بِینائی کہاں ہے

مُجھے دو وقت کی روٹی کے لالے پڑ گئے تھے
ابھی سوچوں گلی، کُوچے وہ ہمسائی کہاں ہے

مبادا بُھول بیٹُھوں میں تُمہارا ناک نقشہ
کہاں ہے بے وفا تُو، میرے ہرجائی کہاں ہے؟؟

جگر پر جا بجا سرطان پلتے ہیں، مسِیحا!
تُمہاری چشم تاثیریں، مسیحائی کہاں ہے؟

مُجھے تسلِیم جذبے ڈھل چکےہیں میرے لیکن
تُمہارے حسن کی پہلی سی رعنائی کہاں ہے؟

اِرادے سے نہیں بس بے اِرادہ پُوچھ بیٹھا
کمانیں کھینچ کے رکھتی وہ انگڑائی کہاں ہے

میں اپنے آپ کو بے وجہ قیدی مانتا ہوں
کِسی نے زُلف کی زنجِیر پہنائی کہاں ہے

نہیں روٹی تو ہم کو چاہیئے کھائیں سموسے
ہمارے ہاں تو سب اچّھا ہے، مہنگائی کہاں ہے؟

سُنائی دے رہے ہیں چار سُو اب غم کے نوحے
کبھی گونجی تھی جو حسرتؔ وہ شہنائی کہاں ہے 

رشید حسرتؔ

غزل

غزل
نئی کہانی، نیا فسانہ، نئے ہی لوگوں میں آنا جانا
کہاں سے سِیکھا مِرے سِتمگر کِسی کا دل یُوں دُکھانا۔ جانا

تُجھے ہے جانا جو روند کر یُوں محبتّوں کو تو شوق سے جا
مِری عقِیدت میں کیا کمی تھی سبب خُدارا بتانا۔ جانا

یہ کِس نے تُجھ سے کہا کہ تُجھ سے بِچھڑ کے جِیون خزاؤں جیسا
تِرے ہی غم کی بہار کو ہی تو دوست میں نے خزانہ جانا

مجھے محبّت کی چار دن کی کہانی پہلے ہی کُھل چُکی تھی
اِِسی لیئے اپنی زِندگی میں تو تیرے آنے کو جانا جانا

بجا کہ تُجھ کو عقِیدتوں کےنئے خزانے مِلا کریں گے
ملال ہو گا سماں بہاروں کا چھوڑ کر تُو سہانا جا۔نا

مُجھے ہے ناموس و نامِ آبا کی پاسداری مِرے رفِیقو
مِرے لِیئے ہے بڑا ہی اعزاز اُن کے ناموں سے جانا جانا

رشِیدؔ کیسی یہ اُلجھنیں ہیں، نجانے کیا روگ پالتا ہے
جو جان تُجھ پر چِھڑک رہے ہیں، کہیں سِتم اُن پہ ڈھا نہ جانا

رشِید حسرتؔ

غزل

غزل

دیکھا نہ کبھی تُم نے سُنا، دیکھتا ہوں میں
بس تُم کو نہیں اِس کا پتا دیکھتا ہوں میں

چہروں کی لکِیروں کے مُجھے قاعدے از بر
پڑھتا ہوں وہی جو بھی لِکھا دیکھتا ہوں میں

ماضی کے جھروکوں سے نہیں جھانک ابھی تُو
(غش کھا کے گِرا) شخص پڑا دیکھتا ہوں میں

کہنے کو تِرا شہر بہُت روشن و تاباں
ہر چہرہ مگر اِس میں بُجھا دیکھتا ہوں میں

گُلشن میں خزاں رُت ہے سمن پِیلے پڑے ہیں
جاتے ہی تِرے زِیست سے، کیا دیکھتا ہوں میں

اُس پار گیا جو بھی نہیں لوٹ کے آیا
کیا بھید چُھپا اِس میں سو جا دیکھتا ہوں میں

وہ جِس کے بنا زِیست مِری آدھی ادھوری
رُخ کیسے بدلتا ہے، ادا دیکھتا ہوں میں

اے دوست نہ بہلا کہ ہوئی بِیچ میں حائل
کم ہو نہ کبھی جو، وہ خلا دیکھتا ہوں میں

ویران مِرے دل کا نگر جِس نے بتایا
جُھوٹا ہے، رشیدؔ اِس کو سجا دیکھتا ہوں میں

رشید حسرتؔ

ہے اِس کا ملال اُس کو، ترقّی کا سفر طے


ہے اِس کا ملال اُس کو، ترقّی کا سفر طے
کیوں میں نے کیا، کر نہ سکا وہ ہی اگر طے

جو مسئلہ تھا اُن کا بہت اُلجھا ہؤا تھا
کُچھ حِکمت و دانِش سے کِیا میں نے مگر طے

ہو جذبہ و ہِمّت تو کٹِھن کُچھ بھی نہِیں ہے
ہو جائے گا اے دوستو دُشوار سفر طے

کِس طرز کا اِنساں ہے، نسب کیسا ہے اُس کا
بس ایک مُلاقات میں ہوتا ہے اثر طے

ہے کیسا نِظام اِس میں فقط جُھوٹ بِکے ہے
مُنہ حق سے نہِیں موڑوں گا کٹ جائے گا سر طے

اِک بار کی مِحنت تو اکارت ہی گئی ہے
سو کرنا پڑا مُجھ کو سفر بارِ دِگر طے

سمجھا نہ کسیؔ نے جو مِرے طرزِ بیاں کو
بیکار گیا پِھر تو مِرا شعر و ہُنر طے

ہے عزم، سفر میں جو پرِندوں کا مُعاون
یہ کِس نے کہا کرتے ہیں یہ بازو و پر طے

کِس کِس نے میرے ساتھ وفا کی یا خفا کی
کر لے گا رشیدؔ آج مِرا دامنِ تر طے


رشید حسرتؔ

Don't have an account? Sign up

Forgot your password?

Error message here!

Error message here!

Hide Error message here!

Error message here!

OR
OR

Lost your password? Please enter your email address. You will receive a link to create a new password.

Error message here!

Back to log-in

Close